ETV Bharat / health

نوجوان ذیابیطس کے شکار افراد کو بعد میں الزائمرمیں مبتلا ہونے کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے - Early Diabetes Effects

author img

By ETV Bharat Urdu Team

Published : May 22, 2024, 2:22 PM IST

طبی جریدے "اینڈوکرائن" میں حال ہی میں شائع ہونے والی ایک تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ بچپن میں ٹائپ 1 یا ٹائپ 2 ذیابیطس والے نوعمروں کو بعد کی زندگی میں الزائمر کی بیماری (AD) ہونے کا خطرہ بڑھ سکتا ہے۔ لہذا الزائمر سے بچنے یا زندگی کے بعد کے مراحل میں اس کے اثرات کو کم کرنے کے لیے بچپن سے ہی ذیابیطس کا صحیح طریقے سے علاج کرنا ضروری ہے۔

نوجوان ذیابیطس کے شکار افراد کو بعد میں الزائمرمیں مبتلا ہونے کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے
نوجوان ذیابیطس کے شکار افراد کو بعد میں الزائمرمیں مبتلا ہونے کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے (Etv Bharat)

حیدرآباد: ایک حالیہ تحقیق سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ ذیابیطس کے شکار نوعمروں اور نوجوان بالغوں کو بعد کی زندگی میں الزائمر کی بیماری کا زیادہ خطرہ ہوسکتا ہے۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ ذیابیطس کو پہلے ہی الزائمر کے لیے خطرہ سمجھا جاتا ہے اور اس کے اور الزائمر کے درمیان تعلق کی تحقیقات کے لیے بہت سی تحقیقیں کی جا چکی ہیں۔ لیکن زیادہ تر تحقیق بالغوں میں ذیابیطس کی وجہ سے الزائمر کے بڑھتے ہوئے خطرے سے متعلق عوامل پر کی گئی ہے۔ لیکن یہ پہلی تحقیق ہے جس میں ذیابیطس میں مبتلا نوجوانوں میں بعد کی عمر میں الزائمر کا خطرہ جاننے کی کوشش کی گئی ہے۔

تحقیق کا مقصد:

ذیابیطس اور الزائمر کے درمیان تعلق کو جاننے کے لیے کی گئی بہت سی پچھلی تحقیقوں نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ ذیابیطس میں بلڈ شوگر کی سطح بہت سی صحت کی پیچیدگیاں پیدا کر سکتی ہے، جس میں خون کی نالیوں اور اعصاب کو نقصان پہنچانا شامل ہے۔

یہ پیچیدگیاں الزائمر کی نشوونما میں دماغی خلیات کے انحطاط میں کردار ادا کر سکتی ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ اس طرح کی زیادہ تر تحقیقوں میں تحقیقات اور تجزیے کے بعد یہ بات سامنے آئی ہے کہ 40 سال یا اس سے زائد عمر کے لوگ جو ٹائپ 1 یا ٹائپ 2 ذیابیطس میں مبتلا ہیں، ان میں سے تقریباً 60 سے 80 فیصد لوگ ذیابیطس میں مبتلا ہیں۔ زندگی کے بعد کے مراحل میں الزائمر کی بیماری (AD) ہونے کا خطرہ ہو سکتا ہے۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ اس سے پہلے کی زیادہ تر تحقیق میں بڑی عمر کے لوگوں کو موضوع بنایا گیا تھا۔ لیکن ’اینڈوکرائن‘ میں شائع ہونے والی اس تحقیق میں پہلی بار ذیابیطس میں مبتلا نوجوانوں میں الزائمر سے متعلق بائیو مارکرز کا پتہ لگانے کے لیے ڈیٹا کا تجزیہ کیا گیا۔ اس تحقیق کے نتائج کی بنیاد پر محققین نے بتایا ہے کہ ذیابیطس کے مرض کو زندگی کے ابتدائی مراحل سے ہی سنبھالنا بہت ضروری ہے جو کہ ٹائپ 1 یا ٹائپ 2 ذیابیطس میں مبتلا ہیں۔ یہ ممکنہ طور پر بعد کے سالوں میں الزائمر کے خطرے کو کم کر سکتا ہے۔

اس تحقیق میں کولوراڈو یونیورسٹی کے Anschutz میڈیکل کیمپس کے محققین نے پہلی بار نوعمروں اور نوجوان بالغوں میں ذیابیطس سے وابستہ الزائمر کی بیماری کی پری کلینیکل علامات کی موجودگی کا جائزہ لیا۔ اس تحقیق میں محققین نے نوعمروں، نوجوان بالغوں اور 15 سے 27 سال کی عمر کے بالغ افراد سے متعلق ڈیٹا کا تجزیہ کیا جنہیں ٹائپ 1 اور ٹائپ 2 ذیابیطس تھا۔ مختلف گروپوں میں کی گئی اس تحقیق میں کل مضامین میں سے 59 فیصد خواتین تھیں۔

تحقیق کے لیے منتخب کیے گئے مضامین میں سے 25 افراد کو ٹائپ 1 ذیابیطس اور 25 کو ٹائپ 2 ذیابیطس تھا۔ سب سے کم عمر گروپ کی اوسط عمر 15 سال تھی، جب کہ نوجوان بالغوں کی عمر تقریباً 27 سال تھی۔ اس تقابلی تحقیق میں ان مضامین کی صحت کی پیچیدگیوں کا موازنہ مضامین کے صحت مند کنٹرول گروپ کے ساتھ کیا گیا، جس میں 15 سال کی عمر کے 25 نوجوان اور 21 نوجوان بالغ شامل تھے جن کی اوسط عمر تقریباً 25 سال تھی۔

اس سرچ گروپ میں بلڈ پلازما کا بھی تجزیہ کیا گیا اور ذیابیطس کے مریضوں اور صحت مند کنٹرول گروپ کے شرکاء میں الزائمر کے بائیو مارکر کی موجودگی کا تعین کرنے کے لیے PET برین سکین کیا گیا۔ جس میں نوجوانوں میں ذیابیطس کے شکار لوگوں میں الزائمر سے وابستہ خون کے بائیو مارکر کی اعلی سطح دیکھی گئی۔ مطالعہ کے دوران ذیابیطس کے مریضوں پر کیے گئے اسکینوں سے پتہ چلا کہ الزائمر کی بیماری سے منسلک دماغی حصوں میں امائلائیڈ اور ٹاؤ پروٹین کی اعلی سطح کی موجودگی، جو الزائمر کی بیماری کے بڑھنے کے خطرے سے منسلک ہیں۔

تحقیق کے نتائج میں کولوراڈو یونیورسٹی میں پیڈیاٹرک اینڈو کرائنولوجی کے اسسٹنٹ پروفیسر اور اس تحقیق کے مصنف ڈاکٹر ایلیسن ایل شامل ہیں۔ شاپیرو نے کہا ہے کہ چونکہ اس تحقیق میں مضامین کی تعداد اور تحقیق و تجزیہ کا دائرہ محدود تھا، اس لیے اس کے نتائج کو مکمل طور پر ثابت نہیں کیا جا سکتا۔ وہ بتاتی ہیں کہ اگرچہ اس تحقیق کے نتائج اس خیال کی تائید کرتے ہیں کہ جو لوگ بچپن سے کسی بھی قسم کی ذیابیطس کا شکار ہیں ان میں بعد کی عمر میں الزائمر کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے لیکن چونکہ یہ ایک چھوٹی سی تحقیق تھی اور اس کا دائرہ محدود تھا، اس لیے اس کے نتائج کی بنیاد پر اس بات کی تصدیق نہیں کی جا سکتی کہ کس قسم کی ذیابیطس الزائمر کا خطرہ بڑھا سکتی ہے یا جوانی میں ذیابیطس کا شکار ہونے والے شخص میں الزائمر کی بیماری کا خطرہ بڑھ جاتا ہے یا نہیں الزائمر سے متعلقہ بائیو مارکر ہمیشہ نظر آئیں گے۔

مزید پڑھیں:اگر آپ کو یہ علامات اپنے جسم میں نظرآئیں تو ہوشیار ہوجائیں! ہیٹ اسٹروک کی علامات ہوسکتی ہیں - Symptoms Of Heat Stroke

مستقبل یا نہیں؟

اس تحقیق کے نتائج یہ بتاتے ہیں کہ کم عمری میں ذیابیطس کی وجہ سے الزائمر کے زیادہ خطرے کے بارے میں تفصیلی معلومات حاصل کرنے کے لیے زیادہ سے زیادہ لوگوں پر مزید تحقیق اور ان کے طویل مدتی فالو اپ کی ضرورت ہے۔ تحقیق میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ نہ صرف امریکہ بلکہ عالمی سطح پر موٹاپے کی شرح بڑھنے سے ذیابیطس کا پھیلاؤ بھی بڑھنے کا خدشہ ہے۔ ایسے میں اس موضوع پر فوری تفصیلی تحقیق اور مطالعہ کی ضرورت اور بھی بڑھ جاتی ہے۔

ETV Bharat Logo

Copyright © 2024 Ushodaya Enterprises Pvt. Ltd., All Rights Reserved.