گذشتہ برس جموں و کشمیر میں خودکشی کے پانچ سو سے زائد واقعات

author img

By

Published : Jul 2, 2021, 8:21 PM IST

suicidal attempt

عالمی ادراہ صحت کے اعداد و شمار کے مطابق ہر برس 10 لاکھ انسان خودکشی کرتے ہیں۔

خودکشی بزدلی اور کم ہمتی کی دلیل ہے۔ یہ کمزور اور مایوس لوگوں کے لیے زندگی کے مسائل و مشکلات، آزمائشوں اور زمہ داریوں سے راہ فرار اختیار کرنے کا ایک غیر مذہبی، غیر اخلاقی اور غیر قانونی طریقہ ہے۔
بد قسمتی سے وادی کشمیر میں خودکشی کے واقعات میں تشویش ناک حد تک اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے اور انتہائی قدم اٹھانے کا یہ رجحان آئے روز سنگین رخ اختیار کرتا جا رہا ہے۔

خودکشی

وادی میں خودکشی کے واقعات رونما ہونے کی خبریں آئے روز سننے کو مل رہی ہیں کہ فلاں مقام پر فلاں نوجوان یا خاتون نے گلے میں پھندا ڈال کر یا زہری شے کھا کر اپنی زندگی کا خاتمے کیا یا فلاں شخص نے دریا میں چھلانگ لگا کر اپنے آپ کو ہلاک کر دیا۔ اگچہ اب تک کئی افراد کو خودکشی کرنے سے روکا بھی گیا ہے لیکن خودکش کے ایسے واقعات بھی سامنے آئے ہیں جو کہ معاشرے کو جھنجوڑنے کے لیے کافی ہیں۔

حال ہی میں وسطی کشمیر کے دو مختلف اضلاع میں ایک 75 سالہ خاتون نے مبینہ طور پر کوئی زہری شے کھا کر خود سوزی کی جبکہ ایک جواں سال غیر مقامی خاتوں نے بھی انتہائی قدم اٹھانے کی کوشش کی۔

ایک رپوٹ میں یہ سنسنی خیز انکشاف کیا گیا ہے کہ گزشتہ ایک برس کے دوران وادی کے مختلف علاقوں سے پانچ سو سے زائد ایسے افراد سرینگر کے ایس ایم ایچ ہسپتال میں داخل کرایا گیا جنہوں نے خودسوزی کی کوششیں کیں۔ جن میں سے 172 مرد جبکہ 343 خواتین اور لڑکیاں شامل تھیں۔ پانچ سو سے زائد افراد میں سے متعدد ہسپتال پہنچنے سے قبل ہی یاتو دم توڑ چکے تھے یا دوران علاج دم توڑ بھیٹے۔

وہیں اٹھائے گئے انتہائی قدم کے بعد ہسپتال میں داخل کرائے گئے ان میں سے بیشتر افراد نے زہریلی شے نوش کر کے اپنی زندگی کا خاتمے کرنے کی کوشش کی تھی۔

ماہر نفسیات کہتے ہیں خودکشی کے بڑھتے کے واقعات کے پیچھے اگچہ کئی وجوہات کارفرما ہیں۔ لیکن جب انسان پر زہنی تناؤ مکمل طور سے حاوی جاتا ہے تو اس کی زندگی میں ایک وقت ایسا بھی آتا ہے جب انسان کو لگتا ہے کہ موت کو گلے لگانے کے بغیر شاید اس کے پاس اب کوئی بھی راستہ باقی نہیں بچا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: بارہمولہ: 24 سالہ نوجوان کی خود کشی

ایک رپورٹ کے مطابق رواں برس اپریل مہینے میں خودکشی کی کوشش کرنے والے 17 افراد کو سرینگر کے صدر ہسپتال لیا گیا جنہوں نے زہر خوری یا خود کو پھانسی پر لٹکا کر اپنی زندگی کا خاتمہ کیا تھا۔

ہر مذہب میں خود ہی اپنی زندگی کا خاتمہ کرنا سنگین جرم، سخت گناہ اور باعث عذاب قرار دیا گیا ہے۔ دین اسلام میں بھی اس کی صریحا ممانعت اور مزمت کی گئی ہے۔

عالمی ادراہ صحت کے اعداد و شمار کے مطابق ہر برس 10 لاکھ انسان خودکشی کرتے ہیں۔ خودکشی کی یہ شرح ایک لاکھ افراد میں 16 فیصد بنتی ہے اس حساب سے دنیا میں ہر 40 سکینڈ بعد ایک شخص انتہائی قدم اٹھاتا ہے۔

ETV Bharat Logo

Copyright © 2024 Ushodaya Enterprises Pvt. Ltd., All Rights Reserved.