ETV Bharat / international

فلسطینی پناہ گزین رفح کی خیمہ بستی میں پتے کھانے پر مجبور

author img

By UNI (United News of India)

Published : Jan 13, 2024, 2:21 PM IST

Palestinians are starving شمالی غزہ سے جبراً نقل مکانی کرنے والے فلسطینی رفح کے پناہ گزین کیمپوں میں اپنی بھوک مٹانے کے لیے پتے کھانے کو مجبور ہو گئے ہیں۔ شدید سردی اور بارش سے بچاؤ کے لیے بھی ان کے پاس کچھ نہیں ہے۔

Palestinian refugees forced to eat leaves in Rafah camp
Palestinian refugees forced to eat leaves in Rafah camp

غزہ: اسرائیلی بربریت کے باعث رفح شہر خیموں کی بستیوں میں تبدیل ہوکر رہ گیا ہے، وہاں دل دہلا دینے والے واقعات دیکھنے کو مل رہے ہیں، بے بسی کا عالم یہ ہے کہ فلسطینی پناہ گزین بھوک مٹانے کے لیے درختوں کے پتے کھانے پر مجبور ہوچکے ہیں۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق رفح سے ملنے والی اطلاعات سے معلوم ہوا ہے کہ بہت سارے فلسطینی خیموں کے بغیر کھلے آسمان زندگی بسر کرنے پر مجبور ہیں۔ تقریباً 100 دن سے جاری جنگ نے ہزاروں فلسطینیوں کو بے گھر کر دیا ہے۔ شدید سردی اور بارش سے بچاؤ کے لیے بھی ان کے پاس کچھ نہیں ہے۔

  • 1.9 million people- almost 90% of population - have been forcibly displaced across #GazaStrip

    Israeli Forces’ evacuation orders, hostilities & constant search for safety has displaced people multiple times

    In north #Gaza access to provide humanitarian aid is severely restricted pic.twitter.com/jDXbloICoF

    — UNRWA (@UNRWA) January 12, 2024 " class="align-text-top noRightClick twitterSection" data=" ">

پناہ گزینوں کی مدد اور ان کے روزگار پر مامور بین الاقوامی ایجنسی (اونروا) کے اعدادوشمار کے مطابق مصری سرحد سے ملنے والے رفح شہر کی خیمہ بستی میں کم از کم 10 لاکھ فلسطینی سکونت اختیار کئے ہوئے ہیں۔ یہ تعداد غزہ پٹی کے کل باشندوں کا 50 فیصد ہے۔

ایک فلسطینی عبدالسلام حمد نے دردناک صورتحال سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ تین دن سے بغیر خیمے کے کھلے آسمان تلے زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔

  • 📍#Gaza As winter sets in, families barely have enough clothes & blankets

    Many of the 1.9 million people forcibly displaced fled with few belongings & are facing further suffering

    Hundreds of thousands are sheltering in incredibly cold plastic tents, trying in vain to keep dry. https://t.co/qokELjyeer

    — UNRWA (@UNRWA) January 12, 2024 " class="align-text-top noRightClick twitterSection" data=" ">

اُنہوں نے کہا کہ ہم نے خیمے میں رہنے والے دیگر پناہ گزینوں سے خواتین کو اپنے یہاں ٹھہرانے کی اجازت طلب کی تھی، جس پر ان کے مرد خیموں سے باہر آ گئے اور عورتوں کو خیمے میں پہنچا دیا گیا۔ ایک اور پناہ گزین غنام کا کہنا تھا کہ خوراک کا حصول انتہائی مشکل ہو گیا ہے ہمیں بتایا گیا ہے کہ کئی لوگ بھوک دور کرنے کے لیے پتوں کا سہارا بھی لے رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:غزہ میں نقل مکانی کیلئے اسرائیل کے احکامات ممکنہ طور پر جنگی جرم ہے: اقوام متحدہ

فلسطینی ہلال احمر کی نبال فرسخ نے صورتحال کے بارے میں بتایا کہ خان یونس میں اسرائیل کے مسلسل حملوں کے باعث یہاں بہت بڑی تعداد میں لوگ پہنچ رہے ہیں۔

یو این آئی

ETV Bharat Logo

Copyright © 2024 Ushodaya Enterprises Pvt. Ltd., All Rights Reserved.