ETV Bharat / state

بہار کی کاراکاٹ اور پاٹلی پتر سیٹ پر اویسی فیکٹر، کس کو پہنچے گا فائدہ - AIMIM candidates In Bihar

author img

By ETV Bharat Urdu Team

Published : May 28, 2024, 10:28 PM IST

Updated : May 29, 2024, 3:02 PM IST

لوک سبھا انتخابات 2024 کے ساتویں مرحلے میں بہار کی 8 سیٹوں پر ووٹنگ ہونی ہے۔ ان 8 سیٹوں میں سے دو سیٹیں اس وقت موضوع بحث بنی ہوئی ہیں کیونکہ کاراکات میں پون سنگھ بطور آزاد امیدوار کے میدان میں ہیں اور پاٹلی پتر سیٹ سے لالو یادو کی بیٹی میسا بھارتی انڈیا الائنس کی امیدوار کے طور پر میدان میں ہیں اور دونوں کا این ڈی اے سے مقابلہ ہے۔ لیکن ایم آئی ایم کے امیدوار بھی دونوں سیٹوں کے دعویدار ہیں۔ایسے میں ایم آئی ایم دونوں سیٹوں پر کس کا کھیل خراب کرے گی؟ کیا ایم آئی ایم این ڈی اے اور انڈیا الائنس کی لڑائی میں فائدہ حاصل کرنے کی کوشش کر رہی ہے؟

AIMIM CANDIDATES IN KARAKAT AND PATLIPUTRA LOK SABHA SEAT
بہار کی کاراکاٹ اور پاٹلی پتر سیٹ پر اویسی فیکٹر، کس کو پہنچے گا فائدہ (Etv Bharat)

پٹنہ: ریاست بہار کی 40 لوک سبھا سیٹوں میں سے اب 8 سیٹوں پر آخری مرحلے میں یکم جون کو ووٹنگ ہوگی۔ ان 8 سیٹوں میں سے 2 سیٹیں ایک کاراکاٹ اور دسوری پاٹلی پتر کی سیٹ ہاٹ بن چکی ہیں۔ کاراکات میں این ڈی اے، انڈیا الائنس، آزاد امیدوار اور ایم آئی ایم کے درمیان مقابلہ ہے جبکہ پاٹلی پتر میں این ڈی اے، انڈیا الائنس اور ایم آئی ایم کے درمیان مقابلہ ہے۔ ایسے میں یہ یقینی طور پر کہا جاسکتا ہے کہ اسد الدین اویسی کی پارٹی ایم آئی ایم کسی نا کسی کا ووٹ ضرور کاٹے گی۔

بہار کی کاراکاٹ اور پاٹلی پتر سیٹ پر اویسی فیکٹر، کس کو پہنچے گا فائدہ (ای ٹی وی بھارت)

پاٹلی پتر میسا بھارتی اور کاراکاٹ پون سنگھ کی وجہ سے پہلے ہی خبروں میں ہے۔ ایم آئی ایم نے دونوں سیٹوں پر امیدوار کھڑے کرکے اس سیٹ کو مزید ہاٹ بنا دیا ہے۔ ایم آئی ایم نے پرینکا چودھری کو کاراکات سے میدان میں اتارا ہے، جبکہ آر جے ڈی کے پرانے ساتھی فاروق رضا کو پاٹلی پترا سے میدان میں اتارا ہے۔ جس کی وجہ سے آر جے ڈی لیڈر مسلسل بیان دے رہے ہیں کہ اویسی بہار میں بی جے پی اور سنگھ کے کہنے پر یہ سب کچھ کر رہے ہیں۔ سیاسی تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ اویسی نے ٹرمپ کارڈ کھیلا ہے کیونکہ ان کا امیدوار جیتنے والا نہیں ہے، یہ لوگ صرف ووٹ کاٹنے کا کام کریں گے۔

کیا انڈیا الائنس کے لیے مشکلات بڑھیں گی؟ سیاسی تجزیہ کار پریا رنجن بھارتی کا کہنا ہے کہ اسد الدین اویسی نہ صرف بہار بلکہ اتر پردیش اور دیگر ریاستوں میں بھی مسلم اکثریتی علاقوں سے اپنے امیدوار کھڑے کرتے رہے ہیں۔ تاہم اس بار بہار میں انھوں نے اپنی حکمت عملی تبدیل کی ہے اور یہاں 8 سیٹوں میں چار پر مسلم امیدوار اور چار پر ہندو امیدوار کو میدان میں اتارا ہے۔ کاراکات میں پرینکا چودھری ہیں، جو انتہائی پسماندہ طبقے سے آتی ہیں، جبکہ پاٹلی پتر میں فاروق رضا ہیں، جو مسلم کمیونٹی سے آتی ہیں۔ دونوں پڑھے لکھے ہیں اور دونوں اپنے اپنے شعبوں میں مہارت بھی رکھتے ہیں، اس وجہ سے انڈیا الائنس کی مشکلات میں کچھ اضافہ ہوا ہے۔

"دونوں جگہوں پر اے آئی ایم آئی ایم کے امیدوار الیکشن جیتنے کے لیے نہیں بلکہ ہارنے کے لیے کھڑے ہوئے ہیں۔ ایک طرح سے یہ کہا جا سکتا ہے کہ اے آئی ایم آئی ایم اپنی طاقت دکھانے کی کوشش کر رہی ہے تاکہ اسے اسمبلی انتخابات میں فائدہ مل سکے، لیکن فی الحال این ڈی اے کو اے آئی ایم آئی ایم کے امیدواروں سے فائدہ ضرور ملے گا۔" سیاسی تجزیہ کار پریا رنجن بھارتی۔

یادو اور کشواہا کا علاقہ ہے کاراکاٹ: اس بار یادو اور کشواہا کی اکثریت والے علاقے کاراکات میں 18 لاکھ 72 ہزار سے زیادہ ووٹر ہیں۔ یہاں اعلیٰ ذات اور مسلم ووٹروں کی اچھی خاصی تعداد ہے۔ ملاح کا ووٹ انتہائی پسماندہ طبقے میں کافی زیادہ ہے۔ دلت ووٹر بھی یہاں فیصلہ کن کردار ادا کرتے ہیں۔ اس سیٹ سے صرف کشواہا، یادو اور راجپوت ذات کے ووٹر سیاست کر رہے ہیں۔ یہاں سب سے زیادہ تعداد تقریباً 3 لاکھ یادو، 2.5 لاکھ مسلمان، 2.5 لاکھ کوری اور کرمی، 2 لاکھ راجپوت، 1.5 لاکھ نشاد، 75 ہزار برہمن اور 50 ہزار بھومیہار ہیں۔

کاراکاٹ میں اویسی کا کھیل: اویسی کی پارٹی ایم آئی ایم نے اقلیتی برادری میں اعتماد کا اظہار نہ کرکے انتہائی پسماندہ ذات کی خاتون ضلع کونسلر پرینکا چودھری پر اپنا اعتماد ظاہر کیا ہے۔ 2021 میں پرینکا اور ان کی ساس دونوں نے گاوں کا الیکشن لڑا۔ پرینکا نے ضلع پریشد کا الیکشن لڑا اور ان کی ساس رام دلاری دیوی نے مکھیا کا الیکشن لڑا اور جیت گئی۔ پرینکا ناصری گنج ویسٹ کی ضلع کونسلر ہیں۔ پرینکا، جو نشاد برادری سے آتی ہیں، ان کے کافی زیادہ حمایتی ہیں۔ کاراکاٹ میں نشاد کے ووٹوں کی تعداد تقریباً ڈیڑھ لاکھ ہے۔ اویسی کے آنے کے بعد مسلم ووٹر پرینکا چودھری کو کتنا پسند کرتے ہیں یہی انتخابی فیکٹر ہے جو دوسرے امیدواروں کو پریشان کرسکتا ہے۔

پاٹلی پتر میں آر جے ڈی کو نقصان پہنچ سکتا ہے: لالو پرساد یادو کی بیٹی میسا بھارتی کے الیکشن لڑنے کی وجہ سے پاٹلی پتر کی سیٹ پہلے سے زیر بحث ہے۔ لیکن ایم آئی ایم نے یہاں سے آر جے ڈی کے ہی پرانے حلیف فاروق رضا کو اپنا امیدوار بنایا ہے۔ایسے میں پاٹلی پترا میں بھی اویسی کی پارٹی مسلم ووٹوں کو اپنی طرف کھینچنے کی کوشش کر رہی ہے۔ فاروق رضا انجینئر بھی ہیں اور گزشتہ انتخابات میں میسا بھارتی کے لیے کام بھی کر چکے ہیں۔ ایسے میں میسابھارتی اور آر جے ڈی کو الیکشن میں نقصان پہنچ سکتا ہے۔

کاراکاٹ میں تعلیم یافتہ امیدوار: ایم آئی ایم کے ریاستی صدر اور ایم ایل اے اختر الایمان کا کہنا ہے کہ دونوں لوک سبھا سیٹوں پر ہمارا مضبوط دعویٰ ہے۔ہم الیکشن میں بہتر نتائج دیں گے۔ اختر الایمان نے یہ بھی کہا کہ وہ کاراکاٹ میں جیت کے لیے پر امید ہیں کیونکہ وہاں کے لوگ حکمراں جماعت اور آر جے ڈی سے ناراض ہیں۔ وہاں مسلمانوں کو نظر انداز کیا جاتا ہے۔

پاٹلی پتر میں میسا بھارتی کے خلاف امیدوار کھڑا کرنے کے سوال پر اختر الایمان نے کہا کہ ہم اپنے حقوق کی جنگ لڑ رہے ہیں۔لالو پرساد یادو نے 2019 میں پانچ مسلم امیدوار دیئے تھے لیکن اس بار صرف دو کو امیدوار بنایا گیا ہے۔یہاں 2 کروڑ 31 لاکھ سے زیادہ مسلمان ہیں۔ اس کے بعد بھی آر جے ڈی کے پاس صرف دو امیدوار ہیں۔ کچھ لوگ بہت کچھ کہہ رہے ہیں لیکن ہم لڑ رہے ہیں کیونکہ ہر ایک کو جمہوریت میں لڑنے کا حق ہے۔

سنگھ ایم آئی ایم کی مدد کر رہی ہے: آر جے ڈی لیڈر مسلسل کہہ رہے ہیں کہ ایم آئی ایم بی جے پی کی 'بی' ٹیم ہے۔ سنگھ اور بی جے پی کے کہنے پر انھوں نے یہاں پر اپنا امیدوار کھڑا کیا ہے۔ آر جے ڈی کے مدھوبنی امیدوار علی اشرف فاطمی نے بھی ایسا ہی الزام لگایا۔ کیونکہ اے آئی ایم آئی ایم نے مدھوبنی سے بھی امیدوار کھڑا کیا ہے۔ علی اشرف فاطمی کا کہنا ہے کہ سنگھ پریوار ضرور ایم آئی ایم کی مدد کر رہا ہے۔ ہر جگہ امیدوار کھڑے کر کے سیکولر پارٹی کے ووٹ خراب کیے جا رہے ہیں۔

لوگ مودی جی کے ساتھ ہیں: این ڈی اے کو ایم آئی ایم کے امیدواروں کو میدان میں اتارنے سے براہ راست فائدہ ہونے والا ہے۔ اس بارے میں بی جے پی کے ترجمان راکیش کمار سنگھ کا کہنا ہے کہ ہم اس بات پر توجہ نہیں دیتے کہ کس کو فائدہ ہوگا اور کس کو نقصان ہوگا۔ عوام ہمارے ساتھ ہے، مودی جی کے ساتھ ہے۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ کون کہاں سے لڑ رہا ہے۔

کشن گنج میں ایم آئی ایم مضبوط: ایم آئی ایم نے 2020 کے بہار اسمبلی انتخابات میں پانچ سیٹیں جیت کر بہار کی سیاست میں اپنی مضبوط موجودگی درج کرائی تھی۔ تاہم ان میں سے چار ایم ایل اے بعد میں آر جے ڈی میں شامل ہو گئے۔ 2019 کے لوک سبھا انتخابات میں بھی پارٹی نے اختر الایمان کو کشن گنج سے میدان میں اتارا تھا لیکن وہ تیسرے نمبر پر آئے تھے۔ اس بار پھر اختر الایمان کو کشن گنج سے دوبارہ میدان اتارا ہے۔

بہار کے اسمبلی ضمنی انتخابات میں اے آئی ایم آئی ایم کے ہونے سے عظیم اتحاد کو نقصان پہنچا ہے۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ لوک سبھا انتخابات میں اویسی کی پارٹی سے کس کو نقصان ہوگا اور کس کو فائدہ ہوگا۔ فی الحال دونوں لوک سبھا سیٹوں پر اویسی کی پارٹی کے امیدوار نے سیاسی پارا پڑھا دیا ہے۔

بہار میں ایم آئی ایم کے آٹھ امیدوار

  • کشن گنج سے اخترالایمان
  • کاراکاٹ سے پرینکا چودھری
  • پاٹلی پتر سے فاروق رضا
  • مدھوبنی سے وقار صدیقی
  • مظفرپور سے انظارالحسن
  • شیوہر سے رانا رنجیت سنگھ
  • گوپال گنج سے دیناناتھ مانجھی
  • مہاراج گنج سے اکھیلیشور پرساد

یہ بھی پڑھیں

پی ایم مودی سے لے کر کنگنا رناوت تک مضبوط امیدواروں کے لیے لٹمس ٹیسٹ

Last Updated : May 29, 2024, 3:02 PM IST
ETV Bharat Logo

Copyright © 2024 Ushodaya Enterprises Pvt. Ltd., All Rights Reserved.