عالمی برادری نے بھوک سے تڑپ رہے فلسطینیوں پر اسرائیلی فائرنگ کی مذمت کی

author img

By AP (Associated Press)

Published : Mar 1, 2024, 7:19 AM IST

Updated : Mar 1, 2024, 8:29 AM IST

Etv Bharat

Israeli Troops Firing on Palestinians جمعرات کو شمالی غزہ میں امدادی ٹرکوں سے امداد حاصل کرنے آئے فلسطینیوں پر اسرائیلی فوجیوں نے فائرنگ کر دی۔ اس فائرنگ میں 112 افراد ہلاک جب کہ تقریباً 800 لوگ زخمی ہوئے ہیں۔ عرب اور مسلم ممالک سمیت اقوام متحدہ نے اسرائیل کی فائرنگ کو گھناؤنا جرم قرار دیا ہے۔ اسرائیلی حکام نے تسلیم کیا ہے کہ اسرائیلی فوجیوں نے امداد حاصل کرنے آئے ہجوم پر گولیاں چلائی ہیں۔

غزہ: عینی شاہدین نے بتایا کہ اسرائیلی فوجیوں نے جمعرات کو غزہ شہر میں امدادی قافلے سے خوراک حاصل کرنے آئے فلسطینیوں کے ہجوم پر فائرنگ کی۔ اس فائرنگ میں 112 افراد ہلاک جب کہ تقریباً 800 لوگ زخمی ہوئے ہیں۔ حماس کے وزارت صحت کے حکام کے مطابق، اسرائیل اور حماس جنگ کے آغاز کے بعد سے ہلاکتوں کی تعداد اب 30,000 سے تجاوز کر گئی ہے۔

  • سعودی عرب، مصر اور اردن نے شمالی غزہ میں ہجوم پر فائرنگ کرنے پر اسرائیل کی مذمت کی:

سعودی عرب، مصر اور اردن کی وزارت خارجہ نے اسرائیل کی جانب سے شمالی غزہ میں امداد حاصل کرنے کی کوشش کرنے والے فلسطینیوں کے ایک بڑے ہجوم پر فائرنگ کرنے پر اسرائیل کی مذمت کی ہے۔ فائرنگ کو تینوں عرب حکومتوں نے شہریوں کو نشانہ بنانے والا حملہ قرار دیا ہے۔

تینوں ممالک کے وزارت خارجہ نے الگ الگ بیانات میں انسانی امداد کی فراہمی کے لیے محفوظ راستوں کو بڑھانے اور بین الاقوامی برادری سے اسرائیل پر بین الاقوامی قانون کی پاسداری کے لیے دباؤ ڈالنے اور فوری جنگ بندی کے لیے ایک معاہدے تک پہنچنے کے لیے فیصلہ کن کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا۔

مصر نے غزہ شہر میں جمعرات کو ہونے والی ہلاکتوں کی مذمت کی ہے۔ مصر کی وزارت خارجہ کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ’’پرامن شہریوں کو نشانہ بنانا ایک گھناؤنا جرم ہے جو اپنے حصے کی انسانی امداد کے حصول کے لیے جمع ہوے تھے۔‘‘

مصری بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ "یہ بین الاقوامی قانون اور بین الاقوامی انسانی قانون کی صریح خلاف ورزی ہے، اور انسانی جانوں کے تقدس کو بھی نظر انداز کرتا ہے۔"

  • غزہ میں امدادی ٹرک کے قریب ہلاکتوں سے حیران ہیں: انتونیو گٹیرس

اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انتونیو گٹیرس نے جمعرات کو امداد کے خواہاں سو سے زائد فلسطینیوں کے قتل کی مذمت کی ہے۔ اقوام متحدہ کے ترجمان سٹیفن ڈوجارک نے صحافیوں کو بتایا کہ یہ اقوام متحدہ کا قافلہ نہیں تھا اور "وہاں اقوام متحدہ کی کوئی موجودگی نہیں تھی،" اس لیے وہ حقائق کا تعین کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

دوجارک نے کہا کہ "یہ ہلاکتیں اس لیے ہوئی ہیں کیونکہ انسانی امداد محفوظ طریقے سے نہیں پہنچائی جا سکی۔" خواہ وہ مرے ہوں یا اسرائیلی فائرنگ سے زخمی ہوئے ہوں، ہجوم کے ہاتھوں کچلے گئے ہوں یا ٹرکوں سے ٹکرا گئے ہوں، "یہ سب اس جنگ کی وجہ سے ایک لحاظ سے تشدد کی کارروائیاں ہیں۔"

دوجارک نے کہا کہ اقوام متحدہ ایک ہفتے سے زیادہ عرصے سے شمالی غزہ تک امداد پہنچانے میں کامیاب نہیں ہوسکا ہے کیونکہ جاری تنازعہ اور انسانی ہمدردی کے عملے اور امداد حاصل کرنے والے لوگوں کے لیے ناقص سکیورٹی انتظامات ہیں۔

انہوں نے کہا کہ "ہم فوری طور پر انسانی بنیادوں پر جنگ بندی کے خواہاں ہیں تاکہ ہم امداد کو منظم، پیش قیاسی اور محفوظ طریقے سے تقسیم کر سکیں۔"

دوجارک نے کہا کہ گٹیرس نے فوری طور پر انسانی بنیادوں پر جنگ بندی اور حماس کے 7 اکتوبر کو جنوبی اسرائیل میں حملے کے دوران یرغمال بنائے گئے تمام یرغمالیوں کی رہائی کے لیے اپنے مطالبے کا اعادہ کیا ہے۔

  • اسرائیل فوج نے کئی لوگوں کے سروں میں گولیاں ماری ہیں: ریاض منصور

اقوام متحدہ میں فلسطینی سفیر اسرائیل پر "جان بوجھ کر اور منظم طریقے سے" انسانی ہمدردی کے قافلے کو نشانہ بنانے کا الزام لگا رہے ہیں، ان کا کہنا ہے کہ ان کی معلومات کے مطابق ہلاک ہونے والے 112 فلسطینیوں میں سے درجنوں کو سروں میں گولی ماری گئی ہے۔

ریاض منصور نے جمعرات کی سہ پہر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے بند ہنگامی اجلاس سے قبل صحافیوں کو بتایا کہ ان کی معلومات کے مطابق ہر چند دن بعد انسانی امداد کے ساتھ آٹا، چینی اور دیگر بنیادی ضروریات کے ٹرک شمالی غزہ میں اسی جگہ کا سفر کرتے ہیں جس کی اشد ضرورت ہے۔ ضرورت مند فلسطینیوں کی مدد کریں۔

انہوں نے کہا کہ جمعرات کے اوائل میں ٹرکوں نے بھی ایسا ہی کیا تھا اور ہزاروں فلسطینی وہاں موجود تھے۔ "اور پھر اچانک، اسرائیلی فوج نے ان پر گولیاں چلانا شروع کر دیں اور ہمارے پاس جو معلومات ہیں ان کے مطابق درجنوں کے سروں میں گولیاں لگی ہیں"۔

منصور نے کہا، "ایسا نہیں ہے، آپ جانتے ہیں، اگر کوئی انتشار اور افراتفری ہو تو لوگوں کو روکنے کے لیے ہوائی فائرنگ کی جاتی ہے، یہ جان بوجھ کر نشانہ بنایا گیا اور لوگوں کو قتل کیا گیا، اور اب ہمارے پاس جو مہلوکین کی تعداد ہے وہ 112 ہے اور یہ تعداد بڑھ رہی ہے، اور 750 زخمی ہیں، اور ممکنہ طور پر یہ تعداد بڑھتی جائے گی۔"

منصور نے کہا کہ اس نے امریکی سفیر لنڈا تھامس گرین فیلڈ سے ملاقات کی اور ان سے درخواست کی کہ وہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اس بیان کی حمایت کریں جس میں ہلاکتوں کی مذمت کی جائے اور ذمہ داروں کو تلاش کرنے اور ان کا احتساب کرنے پر زور دیا جائے۔

  • فوجیوں نے شمالی غزہ میں خوراک کی امداد حاصل کرنے والے فلسطینیوں کے ہجوم پر فائرنگ کی: اسرائیلی حکام

اسرائیلی حکام نے نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر یہ تسلیم کیا ہے کہ شمالی غزہ میں امداد حاصل کرنے آئے فلسطینیوں پر اسرائیلی فوجیوں نے فائرنگ کی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ جب بھیڑ دھمکی آمیز انداز میں سپاہیوں کے قریب پہنچی تو فوجیوں نے فائرنگ کی۔

اسرائیلی فوج نے ایک بیان میں کہا ہے کہ "ٹرکوں کو دھکیلنے، روندنے سے درجنوں افراد ہلاک اور زخمی ہوئے ہیں۔" فوج نے سٹیلائٹ سے لی گئی تصاویر بھی جاری کیے ہیں جس میں سینکڑوں لوگوں کو ٹرکوں کے گرد دکھایا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:

Last Updated :Mar 1, 2024, 8:29 AM IST
ETV Bharat Logo

Copyright © 2024 Ushodaya Enterprises Pvt. Ltd., All Rights Reserved.