ETV Bharat / international

ہیلی کاپٹر حادثہ میں ایرانی صدر اور وزیر خارجہ جاں بحق، سپریم لیڈر نے 5 روزہ قومی سوگ کا اعلان کیا - IRAN PRESIDENT HELICOPTER CRASH

author img

By AP (Associated Press)

Published : May 20, 2024, 6:55 AM IST

Updated : May 20, 2024, 5:23 PM IST

ایرانی صدر ابراہیم رئیسی کی اتوار کی سہ پہر ایک ہیلی کاپٹر حادثے میں موت کے بعد ملک کے سپریم لیڈر آیت اللہ سید علی خامنہ ای نے ایران میں پانچ روزہ قومی سوگ کا اعلان کر دیا ہے۔ اس کے علاوہ ملک کے نائب صدر محمد مخبر کو عبوری صدر مقرر کیا ہے، جنھوں نے علی باقری‌ کو قائم مقام وزیر خارجہ مقرر کر دیا ہے۔

ہیلی کاپٹر حادثہ میں ایرانی صدر ابراہیم رئیسی اور وزیر خارجہ امیرعبداللہیان جاں بحق
ہیلی کاپٹر حادثہ میں ایرانی صدر ابراہیم رئیسی اور وزیر خارجہ امیرعبداللہیان جاں بحق (ای ٹی وی بھارت)

دبئی، متحدہ عرب امارات: ایرانی صدر ابراہیم رئیسی، ملک کے وزیر خارجہ اور دیگر حکام کو لے جانے والا ایک ہیلی کاپٹر اتوار کے روز ایران کے شمال مغربی پہاڑی علاقوں میں گر کر تباہ ہوگیا۔ اس حادثہ میں ایرانی صدر اور وزیر خارجہ حسین امیرعبداللہیان جاں بحق ہوگئے ہیں۔ کل سے ہیلی کاپٹر کی تلاش میں دھند میں گھرے جنگل میں بڑے پیمانے پر ریسکیو آپریشن شروع کر دیا گیا تھا جب کہ عوام سے دعا کی اپیل کی گئی تھی۔

ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ
ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ (تصویر: اے پی)

یہ حادثہ اس وقت پیش آیا ہے جب رئیسی اور سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کی قیادت میں ایران نے گزشتہ ماہ اسرائیل پر ایک بے مثال ڈرون اور میزائل حملہ کیا ہے۔ اس کے علاوہ انھوں نے یورینیم کو پہلے سے کہیں زیادہ ہتھیاروں کے درجے کے قریب تر کر دیا ہے۔

رئیسی ایران کے مشرقی آذربائیجان صوبے میں سفر کر رہے تھے۔ سرکاری ٹیلی ویثرن کے مطابق ایرانی دارالحکومت تہران سے تقریباً 600 کلومیٹر (375 میل) شمال مغرب میں آذربائیجان کی سرحد پر واقع شہر جولفا کے قریب ہیلی کاپٹر نے "ہارڈ لینڈنگ" کی۔ بعد ازاں سرکاری ٹی وی نے اسے اوزی گاؤں کے قریب مشرق کی طرف دکھایا ہے، لیکن تفصیلات متضاد تھیں۔

ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ
ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ (تصویر: اے پی)

رئیسی کے ساتھ سفر کرنے والوں میں ایران کے وزیر خارجہ حسین امیرعبداللہیان، ایران کے مشرقی آذربائیجان صوبے کے گورنر اور دیگر اہلکار اور محافظ شامل تھے۔ ایک مقامی سرکاری اہلکار نے اس پورے واقعہ کے لیے لفظ "حادثہ" کا استعمال کیا تھا، لیکن دوسروں نے یا تو "ہارڈ لینڈنگ" یا "واقعہ" استعمال کیا۔

ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ
ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ (تصویر: اے پی)

حالانکہ بعد کے گھنٹوں میں نہ ہی ایرنا اور نہ ہی سرکاری ٹی وی نے رئیسی کی حالت کے بارے میں کوئی جانکاری فراہم کی تھی۔ تاہم، عوام سے ان کے لیے دعا کرنے کی اپیل کی گئی تھی۔ سرکاری ٹی وی نے شیعہ اسلام کے مقدس ترین مقامات میں سے ایک شہر مشہد میں امام رضا کے مزار کے ساتھ ساتھ ملک بھر میں قم اور دیگر مقامات پر سیکڑوں مومنین کی تصاویر نشر کیں، جن میں سے کچھ اپنے ہاتھ پھیلا کر دعا کر رہے ہیں۔ سرکاری ٹیلی ویژن کے مرکزی چینل نے نماز کو نان اسٹاپ نشر کیا۔

ایران  کے سپریم لیڈر، آیت اللہ سید علی خامنہ
ایران کے سپریم لیڈر، آیت اللہ سید علی خامنہ (تصویر: اے پی)

تہران میں، سڑک کے کنارے نماز پڑھتے لوگوں کے ایک گروپ کو دیکھا گیا، ان میں سے کچھ رو رہے تھے۔

سرکاری ٹی وی پر نشر ہونے والے تبصروں میں، وزیر داخلہ احمد واحدی نے کہا: "محترم صدر اور کمپنی ہیلی کاپٹروں پر سوار ہو کر واپس جا رہے تھے اور ایک ہیلی کاپٹر کو خراب موسم اور دھند کی وجہ سے ہارڈ لینڈنگ کرنا پڑا۔"

ایرنا نے جائے حادثہ کو "جنگل" کہا ہے اور یہ علاقہ پہاڑی بھی ہے۔ سرکاری ٹی وی نے جنگل والے علاقے میں ایس یو ویز کی تصاویر نشر کیں اور کہا کہ وہ خراب موسمی حالات بشمول تیز بارش اور ہوا کی وجہ سے رکاوٹ بن رہے ہیں۔ امدادی کارکنوں کو دھند میں چلتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔

ایرانی صدر ابراہیم رئیسی
ایرانی صدر ابراہیم رئیسی (تصویر: اے پی (فائل))

ہنگامی خدمات کے ترجمان بابک یکتاپرست نے ایرنا کو بتایا کہ ایک ریسکیو ہیلی کاپٹر نے اس علاقے تک پہنچنے کی کوشش کی جہاں حکام کا خیال ہے کہ رئیسی کا ہیلی کاپٹر تھا، لیکن شدید دھند کی وجہ سے وہ لینڈ نہیں کر سکا۔ شام کو دیر گئے، ترکی کی وزارت دفاع نے اعلان کیا کہ اس نے ایک بغیر پائلٹ ایریل گاڑی بھیجی ہے اور تلاش اور بچاؤ کی کوششوں میں شامل ہونے کے لیے رات کو دیکھنے کی صلاحیت والا ایک ہیلی کاپٹر بھیجنے کی تیاری کر رہا ہے۔

سورج غروب ہونے کے کافی دیر بعد، ایرانی حکومت کے ترجمان علی بہادری جہرومی نے تسلیم کیا کہ تلاش میں "ہم مشکل اور پیچیدہ حالات کا سامنا کر رہے ہیں"۔

ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ
ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ (تصویر: اے پی)

انہوں نے کہا کہ صدر کے ہیلی کاپٹر حادثے کی تازہ ترین خبروں سے باخبر رہنا عوام اور میڈیا کا حق ہے لیکن جائے وقوعہ کے نقاط اور موسمی حالات کو دیکھتے ہوئے ابھی تک کوئی نئی خبر نہیں آئی۔ سوشل پلیٹ فارم ایکس پر لکھا گیا کہ۔ "ان لمحات میں صبر، دعا اور امدادی گروپوں پر اعتماد آگے بڑھنے کا راستہ ہے۔"

خود خامنہ ای نے بھی عوام کو دعا کی تلقین کی تھی۔ انھوں نے اپنے خطاب میں کہا تھا کہ، "ہم امید کرتے ہیں کہ اللہ تعالی پیارے صدر اور ان کے ساتھیوں کو پوری سلامتی کے ساتھ قوم کے بازوؤں میں واپس لوٹائے گا،"

63 سالہ رئیسی کو ایک سخت گیر شخص کے طور پر جانا جاتا ہے۔ رئیسی ملک کی عدلیہ کی قیادت بھی کر چکے ہیں۔ انھیں خامنہ ای کے حامی کے طور پر دیکھا جاتا ہے اور بعض تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ وہ خامنہ ای کی موت یا استعفیٰ کے بعد 85 سالہ رہنما کی جگہ لے سکتے ہیں۔

رئیسی اتوار کی صبح آذربائیجان کی سرحد پر آذربائیجان کے صدر الہام علییف کے ساتھ ایک ڈیم کا افتتاح کرنے گئے تھے۔ یہ تیسرا ڈیم ہے جسے دونوں ممالک نے دریائے آراس پر بنایا تھا۔ یہ دورہ دونوں ممالک کے درمیان سرد تعلقات کے باوجود تعمیر کیا گیا۔

ایران ملک میں مختلف قسم کے ہیلی کاپٹر استعمال کرتا ہے لیکن بین الاقوامی پابندیوں کی وجہ سے ان کے پرزے حاصل کرنا اس کے لیے مشکل ہو جاتا ہے۔ اس کا فوجی فضائی بیڑا بھی بڑی حد تک 1979 کے اسلامی انقلاب سے پہلے کا ہے۔ ایرنا نے ایسی تصاویر شائع کیں جن میں رئیسی کے ٹیک آف کے طور پر بیان کیا گیا تھا جو کہ بیل ہیلی کاپٹر سے ملتا جلتا تھا، جس میں نیلے اور سفید رنگ کی پینٹ سکیم پہلے شائع شدہ تصاویر میں دیکھی گئی تھی۔

رئیسی نے ایران کے 2021 کے صدارتی انتخابات میں کامیابی حاصل کی ہے۔ رئیسی پر 1988 میں ایران عراق جنگ کے اختتام پر ہزاروں سیاسی قیدیوں کو بڑے پیمانے پر پھانسی دینے میں ملوث ہونے پر امریکہ کی طرف سے پابندیاں کا سامنا ہے۔

دبئی، متحدہ عرب امارات: ایرانی صدر ابراہیم رئیسی، ملک کے وزیر خارجہ اور دیگر حکام کو لے جانے والا ایک ہیلی کاپٹر اتوار کے روز ایران کے شمال مغربی پہاڑی علاقوں میں گر کر تباہ ہوگیا۔ اس حادثہ میں ایرانی صدر اور وزیر خارجہ حسین امیرعبداللہیان جاں بحق ہوگئے ہیں۔ کل سے ہیلی کاپٹر کی تلاش میں دھند میں گھرے جنگل میں بڑے پیمانے پر ریسکیو آپریشن شروع کر دیا گیا تھا جب کہ عوام سے دعا کی اپیل کی گئی تھی۔

ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ
ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ (تصویر: اے پی)

یہ حادثہ اس وقت پیش آیا ہے جب رئیسی اور سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کی قیادت میں ایران نے گزشتہ ماہ اسرائیل پر ایک بے مثال ڈرون اور میزائل حملہ کیا ہے۔ اس کے علاوہ انھوں نے یورینیم کو پہلے سے کہیں زیادہ ہتھیاروں کے درجے کے قریب تر کر دیا ہے۔

رئیسی ایران کے مشرقی آذربائیجان صوبے میں سفر کر رہے تھے۔ سرکاری ٹیلی ویثرن کے مطابق ایرانی دارالحکومت تہران سے تقریباً 600 کلومیٹر (375 میل) شمال مغرب میں آذربائیجان کی سرحد پر واقع شہر جولفا کے قریب ہیلی کاپٹر نے "ہارڈ لینڈنگ" کی۔ بعد ازاں سرکاری ٹی وی نے اسے اوزی گاؤں کے قریب مشرق کی طرف دکھایا ہے، لیکن تفصیلات متضاد تھیں۔

ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ
ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ (تصویر: اے پی)

رئیسی کے ساتھ سفر کرنے والوں میں ایران کے وزیر خارجہ حسین امیرعبداللہیان، ایران کے مشرقی آذربائیجان صوبے کے گورنر اور دیگر اہلکار اور محافظ شامل تھے۔ ایک مقامی سرکاری اہلکار نے اس پورے واقعہ کے لیے لفظ "حادثہ" کا استعمال کیا تھا، لیکن دوسروں نے یا تو "ہارڈ لینڈنگ" یا "واقعہ" استعمال کیا۔

ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ
ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ (تصویر: اے پی)

حالانکہ بعد کے گھنٹوں میں نہ ہی ایرنا اور نہ ہی سرکاری ٹی وی نے رئیسی کی حالت کے بارے میں کوئی جانکاری فراہم کی تھی۔ تاہم، عوام سے ان کے لیے دعا کرنے کی اپیل کی گئی تھی۔ سرکاری ٹی وی نے شیعہ اسلام کے مقدس ترین مقامات میں سے ایک شہر مشہد میں امام رضا کے مزار کے ساتھ ساتھ ملک بھر میں قم اور دیگر مقامات پر سیکڑوں مومنین کی تصاویر نشر کیں، جن میں سے کچھ اپنے ہاتھ پھیلا کر دعا کر رہے ہیں۔ سرکاری ٹیلی ویژن کے مرکزی چینل نے نماز کو نان اسٹاپ نشر کیا۔

ایران  کے سپریم لیڈر، آیت اللہ سید علی خامنہ
ایران کے سپریم لیڈر، آیت اللہ سید علی خامنہ (تصویر: اے پی)

تہران میں، سڑک کے کنارے نماز پڑھتے لوگوں کے ایک گروپ کو دیکھا گیا، ان میں سے کچھ رو رہے تھے۔

سرکاری ٹی وی پر نشر ہونے والے تبصروں میں، وزیر داخلہ احمد واحدی نے کہا: "محترم صدر اور کمپنی ہیلی کاپٹروں پر سوار ہو کر واپس جا رہے تھے اور ایک ہیلی کاپٹر کو خراب موسم اور دھند کی وجہ سے ہارڈ لینڈنگ کرنا پڑا۔"

ایرنا نے جائے حادثہ کو "جنگل" کہا ہے اور یہ علاقہ پہاڑی بھی ہے۔ سرکاری ٹی وی نے جنگل والے علاقے میں ایس یو ویز کی تصاویر نشر کیں اور کہا کہ وہ خراب موسمی حالات بشمول تیز بارش اور ہوا کی وجہ سے رکاوٹ بن رہے ہیں۔ امدادی کارکنوں کو دھند میں چلتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔

ایرانی صدر ابراہیم رئیسی
ایرانی صدر ابراہیم رئیسی (تصویر: اے پی (فائل))

ہنگامی خدمات کے ترجمان بابک یکتاپرست نے ایرنا کو بتایا کہ ایک ریسکیو ہیلی کاپٹر نے اس علاقے تک پہنچنے کی کوشش کی جہاں حکام کا خیال ہے کہ رئیسی کا ہیلی کاپٹر تھا، لیکن شدید دھند کی وجہ سے وہ لینڈ نہیں کر سکا۔ شام کو دیر گئے، ترکی کی وزارت دفاع نے اعلان کیا کہ اس نے ایک بغیر پائلٹ ایریل گاڑی بھیجی ہے اور تلاش اور بچاؤ کی کوششوں میں شامل ہونے کے لیے رات کو دیکھنے کی صلاحیت والا ایک ہیلی کاپٹر بھیجنے کی تیاری کر رہا ہے۔

سورج غروب ہونے کے کافی دیر بعد، ایرانی حکومت کے ترجمان علی بہادری جہرومی نے تسلیم کیا کہ تلاش میں "ہم مشکل اور پیچیدہ حالات کا سامنا کر رہے ہیں"۔

ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ
ایرانی صدرابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر بظاہر دھند، پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ (تصویر: اے پی)

انہوں نے کہا کہ صدر کے ہیلی کاپٹر حادثے کی تازہ ترین خبروں سے باخبر رہنا عوام اور میڈیا کا حق ہے لیکن جائے وقوعہ کے نقاط اور موسمی حالات کو دیکھتے ہوئے ابھی تک کوئی نئی خبر نہیں آئی۔ سوشل پلیٹ فارم ایکس پر لکھا گیا کہ۔ "ان لمحات میں صبر، دعا اور امدادی گروپوں پر اعتماد آگے بڑھنے کا راستہ ہے۔"

خود خامنہ ای نے بھی عوام کو دعا کی تلقین کی تھی۔ انھوں نے اپنے خطاب میں کہا تھا کہ، "ہم امید کرتے ہیں کہ اللہ تعالی پیارے صدر اور ان کے ساتھیوں کو پوری سلامتی کے ساتھ قوم کے بازوؤں میں واپس لوٹائے گا،"

63 سالہ رئیسی کو ایک سخت گیر شخص کے طور پر جانا جاتا ہے۔ رئیسی ملک کی عدلیہ کی قیادت بھی کر چکے ہیں۔ انھیں خامنہ ای کے حامی کے طور پر دیکھا جاتا ہے اور بعض تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ وہ خامنہ ای کی موت یا استعفیٰ کے بعد 85 سالہ رہنما کی جگہ لے سکتے ہیں۔

رئیسی اتوار کی صبح آذربائیجان کی سرحد پر آذربائیجان کے صدر الہام علییف کے ساتھ ایک ڈیم کا افتتاح کرنے گئے تھے۔ یہ تیسرا ڈیم ہے جسے دونوں ممالک نے دریائے آراس پر بنایا تھا۔ یہ دورہ دونوں ممالک کے درمیان سرد تعلقات کے باوجود تعمیر کیا گیا۔

ایران ملک میں مختلف قسم کے ہیلی کاپٹر استعمال کرتا ہے لیکن بین الاقوامی پابندیوں کی وجہ سے ان کے پرزے حاصل کرنا اس کے لیے مشکل ہو جاتا ہے۔ اس کا فوجی فضائی بیڑا بھی بڑی حد تک 1979 کے اسلامی انقلاب سے پہلے کا ہے۔ ایرنا نے ایسی تصاویر شائع کیں جن میں رئیسی کے ٹیک آف کے طور پر بیان کیا گیا تھا جو کہ بیل ہیلی کاپٹر سے ملتا جلتا تھا، جس میں نیلے اور سفید رنگ کی پینٹ سکیم پہلے شائع شدہ تصاویر میں دیکھی گئی تھی۔

رئیسی نے ایران کے 2021 کے صدارتی انتخابات میں کامیابی حاصل کی ہے۔ رئیسی پر 1988 میں ایران عراق جنگ کے اختتام پر ہزاروں سیاسی قیدیوں کو بڑے پیمانے پر پھانسی دینے میں ملوث ہونے پر امریکہ کی طرف سے پابندیاں کا سامنا ہے۔

Last Updated : May 20, 2024, 5:23 PM IST
ETV Bharat Logo

Copyright © 2024 Ushodaya Enterprises Pvt. Ltd., All Rights Reserved.