حکومت نے لوک سبھا میں اقتصادی نظام پر وائٹ پیپر پیش کیا

author img

By UNI (United News of India)

Published : Feb 9, 2024, 12:59 PM IST

Updated : Feb 10, 2024, 6:15 AM IST

Discussion on White Paper

Discussion on White Paper: حکومت کی طرف سے جمعرات کو پارلیمنٹ میں ہندوستانی معیشت پر پیش کئے گئے وائٹ پیپر میں کہا گیا ہے کہ ڈاکٹر منموہن سنگھ کی قیادت والی پچھلی متحدہ ترقی پسند اتحاد کی حکومت کو صحت مند معیشت ورثے میں ملی تھی۔ لیکن اس نے اسے 10 برسوں میں مفلوج کر دیا تھا۔

نئی دہلی: مرکزی وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے دونوں ایوانوں میں اس وائٹ پیپر کی کاپیاں پیش کیں۔ اس پر بعد میں اس سیشن میں بات ہو سکتی ہے۔ وائٹ پیپر میں کہا گیا ہے کہ یو پی اے کے دور میں ملک میں مہنگائی کی شرح 10 فیصد سے زیادہ رہی اور بینکنگ سیکٹر کمزور ہو گیا تھا۔ اس نے کہا کہ یو پی اے حکومت کے دور کے دیگر میکرو اکنامک ڈیٹا سے پتہ چلتا ہے کہ اس وقت ہندوستانی معیشت خراب حالت میں تھی اور اس نے ملک کی شبیہ کو داغدار کیا تھا اور سرمایہ کاروں کے اعتماد کا متزلزل کیا تھا۔

وائٹ پیپر میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ یو پی اے حکومت اقتصادی ترقی کی رفتار کو تیز کرنے کے لیے اتنی بے چین تھی کہ اس نے معیشت کے اہم بنیادی ستونوں کو نظر انداز کر دیا۔ وائٹ پیپر میں کہا گیا ہے کہ "ایسا ہی ایک ستون قیمتوں میں استحکام کا ستون ہے، جسے یو پی اے حکومت نے بری طرح کمزور کر دیا تھا۔ 2009 سے 2014 کے دوران مہنگائی آسمان پر تھی اور اس کے برے اثرات عام آدمی کو بھگتنا پڑے۔

دستاویز میں کہا گیا ہے کہ ہندوستانی بینکنگ سیکٹر میں بحران یو پی اے حکومت کی بدترین میراثوں میں سے ایک ہے، حالانکہ بینکنگ سیکٹر معیشت کے لیے سب سے اہم ہے۔

سیتا رمن کی طرف سے پیش کی گئی اس دستاویز میں کہا گیا ہے کہ یہ وہ دور ہے جس میں سرمائے کا بہاؤ بہت اہمیت رکھتا ہے لیکن یو پی اے حکومت کے انتظام میں کوتاہیوں کی وجہ سے ہندوستانی معیشت کے اتار چڑھاو کا زیادہ خطرہ نظر آنے لگا۔کیونکہ اس وقت حکومت نے غیر ملکی تجارتی قرضوں پر انحصار بہت بڑھا دیا تھا۔

لوک سبھا انتخابات سے عین قبل پیش کیے گئے موجودہ وائٹ پیپر نے 2008 کے عالمی مالیاتی بحران سے نمٹنے کے لیے اس وقت کی کانگریس کی قیادت والی یو پی اے حکومت کے ذریعہ متعارف کرائے گئے مالیاتی محرک پیکج کو نافذ کرنے کی حکومت اور اپوزیشن کی صلاحیت پر سوالیہ نشان کھڑا کر دیا ہے۔ جب لاگو کیا گیا تو یہ اس بیماری سے بڑا مسئلہ بن گیا جس کے علاج کے لیے اسے متعارف کرایا گیا تھا۔

وائٹ پیپر میں کہا گیا ہے کہ واجپائی حکومت نے اقتصادی اصلاحات کے ذریعے بنیاد کو مضبوط کیا تھا اور معیشت کی رفتار کو تیز کیا تھا، لیکن یو پی اے حکومت نے اس کا فائدہ نہیں اٹھایا اور پوری دہائی ضائع ہو گئی۔

وائٹ پیپر میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ یو پی اے کے دور میں تمام سرکاری کاموں اور فیصلوں میں بدعنوانی عروج پر تھی، بشمول سرکاری خریداری، قدرتی وسائل (کانوں) کی تقسیم اور ریگولیٹری منظوری۔ اس میں کہا گیا ہے کہ 2014 میں اقتدار میں آنے کے بعد مودی حکومت نے معیشت کو آگے لے جانے کے لیے فوری طور پر نظام اور عمل کو تبدیل کیا۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ حکومت کی جانب سے پیش کیے گئے اس وائٹ پیپر سے قبل کانگریس نے مودی حکومت کے خلاف 'ناانصافی کی مدت 2014-24 کے 10 سال' کے عنوان سے بلیک پیپر جاری کیا۔ جس میں پارٹی نے کہا ہے کہ مودی حکومت کے پچھلے 10 سالوں میں مہنگائی نے غریبوں کے منہ سے نوالہ چھین لیا ہے۔ آٹا 22 روپے سے بڑھ کر 35 روپے فی کلو، سرسوں کا تیل 90 روپے ہو گیا۔ یہ بڑھ کر 143 روپے فی کلو ہو گیا ہے۔

کانگریس کے بلیک پیپر میں کہا گیا ہے کہ 2023 کے گلوبل ہنگر انڈیکس میں ہندوستان 125 ممالک میں 111 ویں نمبر پر تھا اور پاکستان (102 ویں)، بنگلہ دیش (81 ویں) اور نیپال (69 ویں) سے نیچے تھا۔

واضح رہے کہ یکم فروری کو سال 2024-25 کا عبوری بجٹ پیش کرتے ہوئے محترمہ سیتا رمن نے وائٹ پیپر لانے کا اعلان کیا تھا۔ انہوں نے کہا تھا کہ وائٹ پیپر میں وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت میں 2014 سے 2024 تک نیشنل ڈیموکریٹک الائنس (این ڈی اے) حکومت کے دوران اور اس سے پہلے 2004 سے اس وقت کے متحدہ ترقی پسند اتحاد کے دوران معیشت کا تقابلی چارٹ پیش کیا جائے گا۔

وزیر خزانہ نے کہا تھا کہ اس کا مقصد ماضی کی غلطیوں سے سبق سیکھ کر آگے بڑھنا ہے۔ قابل ذکر ہے کہ پارلیمنٹ کے موجودہ اجلاس میں ایک دن کی توسیع کی گئی ہے اور ممکنہ طور پر ہفتہ کو وائٹ پیپر پر بحث کی جائے گی۔

یہ بھی پڑھیں:

ہندوستان کی معیشت رواں مالی سال میں سات فیصد کی شرح سے ترقی کر رہی ہے۔ یہ مسلسل تیسرا سال ہوگا جب معیشت سات فیصد سے زیادہ شرح سے ترقی کرے گی۔ ہندوستان اس وقت جی۔20 گروپ میں سب سے تیزی سے ترقی کرنے والی معیشت ہے۔

وزیر اعظم نریندر مودی نے راجیہ سبھا میں صدرجمہوریہ کے خطاب پر شکریہ کی تحریک پر بحث کرتے ہوئے بدھ کو کہا تھا کہ ہندوستان 2014 سے پہلے پانچ کمزور ترین معیشتوں میں شمار ہوتا تھا اور آج یہ ملک دنیا کی پہلی پانچ معیشتوں میں شامل ہے اور یہ اندازہ ہے کہ جلد ہی یہ دنیا کی تیسری بڑی معیشت بن جائے گی۔ (یو این آئی)

Last Updated :Feb 10, 2024, 6:15 AM IST
ETV Bharat Logo

Copyright © 2024 Ushodaya Enterprises Pvt. Ltd., All Rights Reserved.